Announcement

Collapse
No announcement yet.

Unconfigured Ad Widget

Collapse

collection of Ghazals (غزل)

Collapse
This is a sticky topic.
X
X
 
  • Filter
  • Time
  • Show
Clear All
new posts



  • میں نے یہ کب کہا تھا کہ سارا ادھیڑ دے
    جتنی بُنت خراب ہے، اتنا ادھیڑ دے

    ان کا نصیب بس وہی صحرا کی خاک ہے
    جن کو فراقِ یار کا لمحہ ادھیڑ دے

    ممکن ہے اب کی بار میں آدھا دکھائی دوں
    ممکن ہے تیرا ہجر یہ چہرہ ادھیڑ دے

    ممکن ہے میری آنکھ پہ منظر نہ کھل سکیں
    ممکن ہے کوئی خواب کا بخیہ ادھیڑ دے

    ممکن ہے تیرے پاس نہ ملنے کا عذر ہو
    ممکن ہے کوئی شہر کا رستہ ادھیڑ دے

    انورؔ کہا تھا عشق نے چمڑی ادھیڑ دوں
    میں نے بھی کہہ دیا ہے کہ، اچھا ادھیڑ دے

    صغیر انورؔ

    Comment

    Working...
    X