Announcement

Collapse
No announcement yet.

Unconfigured Ad Widget

Collapse

collection of Nazam (نظم)

Collapse
This is a sticky topic.
X
X
 
  • Filter
  • Time
  • Show
Clear All
new posts



  • ﻣﯿﺮﮮ ﭼﺎﺭﮦ ﮔﺮ۔۔
    ﺗﯿﺮﯼ ﭼُﭗ ﮐُﮭﻠﮯ۔
    ﮐﮧ
    ﮨﻮﺍ ﮐﻮ ﺍﺫﻥِ ﺳﻔﺮ ﻣﻠﮯ !!
    ﻣﯿﺮﮮ ﺯﺧﻢ ﮐﮭﻞ ﮐﮯ ﮔﻼﺏ ﮨﻮﮞ !
    ﯾﮧ ﺟﻮ ﺳﺎﻧﺲ ﺳﺎﻧﺲ ﮨﯿﮟ ﻭﺣﺸﺘﯿﮟ ۔
    ﯾﮧ ﺳــــﺮﺍﺏ ﻭ ﺧــــﻮﺍﺏ ﮐﯽ ﻣﻨﺰﻟﯿﮟ ۔
    ﯾﮧ ﺩِﯾﮯ ﮐﯽ ﻟﻮ ﺳﯽ ﺟـــــــﻮ ﺁﺱ ﮨﮯ۔۔
    ﺗﯿـــــــــﺮﺍ ﺣُﮑﻢ ﮨﻮ ۔۔۔
    ﺗﻮ ﯾﮧ ﺟﻞ ﺑُﺠﮭﮯ !!
    ﻣﺠﮭﮯ ﻋﺸﻖ ﮐﺎ ﯾﮧ ﺻِﻠﮧ
    ﻣﻠﮯ ۔
    ﺗﯿﺮﮮ ﮨﺎﺗﮪ ﺭﻭﺡ ﮐﯽ ﮔﺮﮦ ﮐﮭﻠﮯ ۔
    ﯾﮧ ﺑﺪﻥ ﮐﯽ ﻗﯿﺪ ﺳﮯ ﮨﻮ ﺭﮨﺎ ۔
    ﺗﯿﺮﺍ ﯾﮧ ﮐــــــــﺮﻡ ۔
    ﻣﺠﮭﮯ ﮐﯿﻤﯿﺎﺀ!!
    ﻧﮧ ﺳﻮﺍﻝ ﮨﻮﮞ
    ﻧﮧ ﺟﻮﺍﺏ ﮨﻮﮞ ۔
    ﮐﺴﯽ ﻃﻮﺭ ﺧﺘﻢ ﻋﺬﺍﺏ ﮨﻮں
    اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
    اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

    Comment




    • ’تُجھے اس قدر ہیں شکایتیں
      کبھی سُن لے میری حکایتیں
      تُجھے گر نہ کوئی ملال ھو
      میں بھی ایک تُجھ سے گلہ
      کروں.
      نہیں اور کُچھ بھی جواب
      اب
      میرے پاس تیرے سوال کا
      تُو کرے گا کیسے یقیں میرا
      مُجھے تو بتا دے میں کیا
      کروں.
      یہ جو بھولنے کا سوال ھے
      میری جان یہ بھی کمال ھے
      جو نجات چاھوں حیات سے
      تجھے بھولنے کی دعا کروں .
      تیرا پیار تیری محبتیں
      میری دلکشی میری راحتیں
      جو ھو جسم و جاں میں رواں
      دواں
      اُسے کیسے خود سے جُدا کروں
      تُو ھے دل میں، تُو ھی نظر میں ھے
      تو ھی شام تو ھی سحر میں ھے
      تُو نماز عشق ھے جان جاں ، تجھے
      رات دن میں ادا کروں .
      اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
      اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

      Comment




      • میرے ماضی کے لمحے لمحے کا
        جتنا پھیلاؤ تھا ، سمٹنے لگا
        حرف ڈوُبے ہُوئے ، اُبھرنے لگے
        وقت جاتا ہُوا ، پلٹنے لگا

        "احمد ندیم قاسمی"
        اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
        اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

        Comment




        • ایک آنچل ہے
          جو پھیلا ہے افق تا بہ افق
          ایک سایہ ہے جو چھایا ہے دل وحشی پر
          نغمگی ایک طرح پھوٹتی رہتی ہے کہیں
          خامشی رنگ لئے گھومتی رہتی ہے کہیں
          ڈھونڈھتا رہتا ہوں
          لہجوں میں کبھی باتوں میں
          ڈھونڈھتا رہتا ہوں
          خوشبو میں
          کبھی چاندنی راتوں میں تجھے
          تجھ کو پاؤں تو بہت دل کو سکوں آئے گا
          تجھ سے مل لوں گا تو قرنوں میں بدل جاؤں
          علی ظہیر لکھنوی
          اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
          اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

          Comment




          • وہ جو عشق پیشہ تھے
            دل فروش تھے
            مر گئے
            وہ ہوا کے ساتھ چلے تھے
            اور ہوا کے ساتھ بکھر گئے
            وہ عجیب لوگ تھے ____
            برگِ سبز کو برگِ زرد کا روپ دھارتے دیکھ کر
            رخِ زرد اشکوں سے ڈھانپ کر
            بھرے گلشنوں سے
            مثالِ سایۂ ابر
            پل میں گزر گئے ___
            وہ قلندرانہ وقار تن پہ لپیٹ کر
            گھنے جنگلوں میں گھری ہوئی
            کھلی وادیوں کی بسیط دھند میں
            رفتہ رفتہ اتر گئے
            اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
            اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

            Comment




            • ﻣﯿﺮﮮ ﭼﺎﺭﮦ ﮔﺮ۔۔
              ﺗﯿﺮﯼ ﭼُﭗ ﮐُﮭﻠﮯ۔
              ﮐﮧ
              ﮨﻮﺍ ﮐﻮ ﺍﺫﻥِ ﺳﻔﺮ ﻣﻠﮯ !!
              ﻣﯿﺮﮮ ﺯﺧﻢ ﮐﮭﻞ ﮐﮯ ﮔﻼﺏ ﮨﻮﮞ !
              ﯾﮧ ﺟﻮ ﺳﺎﻧﺲ ﺳﺎﻧﺲ ﮨﯿﮟ ﻭﺣﺸﺘﯿﮟ ۔
              ﯾﮧ ﺳــــﺮﺍﺏ ﻭ ﺧــــﻮﺍﺏ ﮐﯽ ﻣﻨﺰﻟﯿﮟ ۔
              ﯾﮧ ﺩِﯾﮯ ﮐﯽ ﻟﻮ ﺳﯽ ﺟـــــــﻮ ﺁﺱ ﮨﮯ۔۔
              ﺗﯿـــــــــﺮﺍ ﺣُﮑﻢ ﮨﻮ ۔۔۔
              ﺗﻮ ﯾﮧ ﺟﻞ ﺑُﺠﮭﮯ !!
              ﻣﺠﮭﮯ ﻋﺸﻖ ﮐﺎ ﯾﮧ ﺻِﻠﮧ
              ﻣﻠﮯ ۔
              ﺗﯿﺮﮮ ﮨﺎﺗﮪ ﺭﻭﺡ ﮐﯽ ﮔﺮﮦ ﮐﮭﻠﮯ ۔
              ﯾﮧ ﺑﺪﻥ ﮐﯽ ﻗﯿﺪ ﺳﮯ ﮨﻮ ﺭﮨﺎ ۔
              ﺗﯿﺮﺍ ﯾﮧ ﮐــــــــﺮﻡ ۔
              ﻣﺠﮭﮯ ﮐﯿﻤﯿﺎﺀ!!
              ﻧﮧ ﺳﻮﺍﻝ ﮨﻮﮞ
              ﻧﮧ ﺟﻮﺍﺏ ﮨﻮﮞ ۔
              ﮐﺴﯽ ﻃﻮﺭ ﺧﺘﻢ ﻋﺬﺍﺏ ﮨﻮں
              اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
              اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

              Comment




              • شبنمی آنکھوں کے جگنو
                کانپتے ہونٹوں کے پھول
                ایک لمحہ تھا جو امجد
                آج تک گزرا نہیں.

                "امجد اسلام امجد"
                اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
                اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

                Comment




                • دسمبر اب کے جانا تو
                  دلوں کے میل
                  حسد کی آگ
                  بری نظریں
                  گھٹن اور بدگمانی سب
                  تم اپنے ساتھ لے جانا
                  جہاں تم ڈوبتے ہو نا
                  وہیں ان کو بھی
                  دفنا دینا

                  تم تحفے تو بھیجو گے؟
                  جنوری کے ہاتھوں نا؟
                  محبت بے تحاشا سی
                  خلوص و گرم جوشی بھی
                  بے غرض ناطے
                  گہرے تعلق اور
                  نرم سے دل
                  جو سب کے لیے دھڑکتے ہوں
                  بھجوا دینا

                  -
                  Never stop learning
                  because life never stop Teaching

                  Comment



                  • اِک بہتی ریت کی دہشت ہے
                    اور ریزہ ریزہ خواب میرے
                    بس ایک مسلسل حیرت ہے
                    کیا ساحل ۔۔۔۔۔ کیا گرداب میرے
                    میں ایک بھکاری لفظوں کا
                    یہ کاغذ ہیں کشکول میرے
                    ہیں ملبہ زخمی خوابوں کا
                    یہ رستہ بھٹکے بول میرے
                    Never stop learning
                    because life never stop Teaching

                    Comment



                    • یہ بارشیں بھی تم سی ہیں ۔۔
                      جو برس گئی تو بہار ہیں
                      جو ٹھہر گئی تو قرار ہیں
                      کبھی آ گئیں یونہی بے سبب
                      کبھی چھا گئیں یونہی روز و شب
                      کبھی شور ہیں
                      کبھی چپ ہیں
                      یہ بارشیں بھی تم سی ہیں ۔ ۔ ۔
                      کسی یاد میں کسی رات کو
                      اک دبی ہوئی سی راکھ کو
                      کبھی یوں ہوا کہ بجھا دیا
                      کبھی خود سے خود کو جلا دیا
                      کہیں بُوند بُوند میں گم سی ہیں
                      یہ بارشیں بھی تم سی ہیں

                      Comment

                      Working...
                      X