Above Post

Collapse

pharsi shairi

Collapse
X
 
  • Filter
  • Time
  • Show
Clear All
new posts

  • pharsi shairi

    pharsi shairi

    چراغِ خویش برافروختم کہ دستِ کلیم
    در ایں زمانہ نہاں زیرِ آستیں کردند

    میں نے اپنا چراغِ (دل) خود ہی بھڑکایا ہے کہ اس زمانے میں دستِ کلیم(بزرگوں کا ہاتھ) آستین میں چھپا ہوا ہے۔

    اقبالؒ
    اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
    اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔


  • #2
    Re: pharsi shairi

    هفت آسمان و زمین وخلقان، همه در رقص آیند
    آن ساعت که صادقی در رقص آید

    ساتوں آسمان اور زمین اور تخلیقات سب کے سب رقص کرنے لگتے ہیں اُس وقت جبکہ ایک سچا عاشق رقص کرتا ہے۔

    حضرت شمس تبریزی رحمتہ اللہ علیہ
    اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
    اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

    Comment


    • #3
      Re: pharsi shairi

      گر زلفِ پریشانت درد ستِ صبا افتد
      ہر جا کہ دلے باشد بربادِ ہوا اُفتد

      اگر تیری بکھری ہوئی زلف صبا کے ہاتھ پڑ جائے، جہاں بھی کوئی دل ہو، ہوا میں برباد ہو جائے۔

      ما کِشتیِ صبرِ خود در بحرِ غم افگندیم
      تا آخر ازیں طوفاں ہر تحتہ کجا اُفتد

      ہم نے اپنے صبر کی کِشتی غم کے سمندر میں ڈال دی، دیکھیئے! اس طوفان سے ہر تحتہ کہاں پہنچے۔

      ہر کس بہ تمنّائے فال از رُخ او گیرد
      بر تختہِ٘ فیروزی تا قرعہ کرا اُفتد

      ہر شخص تمنّا میں اُس کے رُخ سے فال نکالتا ہے دیکھیئے، کامیابی کے تختے پر کس کا قرعہ پڑے۔

      آں بادہ کہ دلہا را از غم دہد آزادی
      پر خونِ جگر گردد چوں درو بما اُفتد

      وہ شراب، جو دلوں کو غم سے آزادی دیتی ہے، جب ہماری باری آتی ہے، جگر کے خون سے پُر ہوتی ہے۔

      حالِ دلِ حافظؔ شد از دستِ غمِ ہجرت
      چوں عاشقِ سرگرداں کز دوست جدا اُفتد

      تیرے ہجر کے غم کے ہاتھوں، حافظؔ کے دل کا حال ایسا ہو گیا ہے جیسا کہ وہ حیران عاشق، جو دوست سے جدا ہو جائے۔

      حافظ شیرازی رحمتہ اللہ علیہ
      اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
      اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

      Comment


      • #4
        Re: pharsi shairi

        دل سوئے تو ام دنبہ بجائے دیگرستم
        تا خلق نداند کہ ــــــــ ترامی نگرستم

        (دل تیری طرف ہے گوشہ چشم سے دوسروں کی طرف دیکھ رہا ہوں تا کہ لوگ یہ نہ جانیں کہ میں تیرے ہی نظارہ میں مصروف ہوں۔)
        اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
        اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

        Comment


        • #5
          Re: pharsi shairi

          منم آں قطرہ شبنم
          با نوکِ خار می رقصم

          (میں وہ شبنم کا قطرہ ہوں جو کانٹے کی نوک پر رقص کرتا ہوں۔)
          اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
          اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

          Comment


          • #6
            Re: pharsi shairi

            مصحفے را ورق ورق دیدم
            ہیچ سورت نہ مثل صورت اوست

            قرآن شریف کا ورق ورق میں نے دیکھا کوئی سورت اس (نبی کریمﷺ) کی صورت کی مثل نہیں۔

            حضرت بو علی قلندر رحمتہ اللہ علیہ
            اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
            اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

            Comment


            • #7
              Re: pharsi shairi

              ز ناوکے کہ بمحبت از کمانِ ابرویت
              کدام ہست کہ بر سینہ زخمِ عشق نخورد

              تیری کمانِ ابرو سے جو تیر نکلا وہ کون ہے جس نے سینہ پر عشق کا زخم نہ کھایا ہو۔
              اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
              اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

              Comment


              • #8
                Re: pharsi shairi

                تُو اس میدان میں نہ خدا ہے اور نہ ہی تو رسول ہے اس لیے اس بحث کو چھوڑو اور تبراً اور تولاً (دوستی اور دشمنی) سے پاک ہو جاؤ۔ تم ایک مشت بھر خاک ہو اس لیے تمہارا کام صرف یہ ہے کہ تم اللہ کے راستہ کی مٹی بن جاؤ تم مشتِ خاک ہو اور خاک کی ہی بات کرو کسی کے خلاف کچھ نہ کہو۔

                حضرت رابعہ عدویہ رحمتہ اللہ علیہا
                اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
                اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

                Comment


                • #9
                  Re: pharsi shairi

                  از بختِ بدم اگر فروشد خورشید
                  از نور رخت مہا چراغ گیرم

                  (اگر میری بدبختی سے سورج غروب ہو چکا ہے تو ہو جائے۔ اے چاند میں نے تیرے رُخ کے نور سے چراغ روشن کر لیا ہے۔)
                  اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
                  اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

                  Comment


                  • #10
                    Re: pharsi shairi

                    آئینہ زنگار از صیقل ز تقوےٰ پاک کن
                    پاک بنگر اندارآں آئینہ جانا نہ را

                    (زنگ آلود آئینہ کو تقوےٰ کی صیقل سے صاف کر لے، پھر اس آئینہ میں معشوق کو اچھی طرح دیکھ۔)

                    گردِ شمعِ جانِ معشوقے بگرد از عاشقی
                    عاشقی آموز اندر سوختن پروانہ را

                    (عاشقی کی وجہ سے معشوق کی جان کی شمع کے گرد چکر لگا، جلنے میں پروانہ کو عاشقی سکھا۔)

                    بحسنِ خُلق تواں کرد صید اہلِ نظر
                    بدام و دانہ نگیرند مرغِ دانا را

                    (اہلِ نظر کو حسن اخلاق کے ذریعہ شکار کیا جا سکتا ہے، سمجھدار پرند کو جال اور دانے کے ذریعہ نہیں پکڑتے ہیں۔)

                    حافظ شیرازی رحمتہ اللہ علیہ
                    اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
                    اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

                    Comment


                    • #11
                      Re: pharsi shairi

                      عشق شکیب آزما خاک زخود رفتہ را
                      چشم ترے داد و من لذت دیدن دہم

                      (صبر آزما عشق نے اپنے مقصد سے بے خبر آدمی کو آنسو دیئے ہیں اور آنسوؤں سے بھیگی ہوئی آنکھوں میں (محبوب کے دیدار) کی لذّت پیدا کی ہے۔)

                      علامہ اقبال رحمتہ اللہ علیہ
                      اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
                      اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

                      Comment


                      • #12
                        Re: pharsi shairi

                        آگہہ نشد طبیب ز دردِ نہانِ ما
                        ایں نبض ما خموش تر است از زبانِ ما
                        (طبیب ہمارے دردِ نہاں سے بالکل بھی آگاہ نہ ہوا کیونکہ ہماری یہ نبض ہماری زبان سے بھی زیادہ خاموش ہے۔)
                        اللھم صلی علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما صلیت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔
                        اللھم بارک علٰی محمد وعلٰی آل محمد کما بارکت علٰی ابراھیم وعلٰی آل ابراھیم انک حمید مجید۔

                        Comment

                        Below Post Add

                        Collapse
                        Working...
                        X