Above Post

Collapse

جب اپنا قافلہ عزم و یقیں سے نکلے گا

Collapse
X
 
  • Filter
  • Time
  • Show
Clear All
new posts

  • جب اپنا قافلہ عزم و یقیں سے نکلے گا


    جب اپنا قافلہ عزم و یقیں سے نکلے گا
    جہا ں سے چاہیں گے رستہ وہیں سے نکلے گا
    لباسِ غیر نہ ہوگا بدن پہ جب اپنے
    تو کوئی سانپ نہ پھر آستیں سے نکلے گا
    وہ آسمانوں میں بانٹے گاروشنی اپنی
    وہ آفتاب اسی سرزمیں سے نکلے گا
    وطن کی ریت ذرا ایڑیاں رگڑنے دے
    مجھے یقیںہے کہ پانی یہیں سے نکلے گا
    مقابلہ تو مظفرؔ کروں اندھیروں سے
    چراغ بن کے پسینہ جبیں سے نکلے گا








Below Post Add

Collapse
Working...
X